جمعہ ۲۲ جنوری۲۰۲۱

آئی ایم ایف نے پاکستان کیلئے 45 کروڑ 20 لاکھ ڈالرز کی منظوری دے دی

جمعہ, ۲۰   دسمبر ۲۰۱۹ | ۱۰:۳۶ صبح

عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان کے لیے 45 کروڑ 20 لاکھ ڈالر قرض کی منظوری دے دی ہے۔

عالمی مالیاتی فنڈ(ٓئی ایم ایف )کے ایگزیکٹو بورڈ نے پاکستان کی اقتصادی کارکردگی کا پہلا جائزہ مکمل کر لیاہے ۔عالمی مالیاتی بینک کے جائزے میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کا اقتصادی اصلاحات کا پروگرام درست سمت پر ہے اور پاکستانی حکام کے پالیسی پر عمل درآمد سے معیشت مستحکم کرنے میں مدد مل رہی ہے، مارکیٹ کے مطابق ایکسچینج ریٹ درست رہا۔آئی ایم ایف نے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں پاکستان کے لیے 45 کروڑ 20 لاکھ ڈالرز قرض کی منظوری بھی دی ہے ۔اس کے باوجود بڑے خطرات موجود ہیں۔ آئی ایم ایف کے اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کو ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلنے کے لیے تمام ضروری اقدامات کرنا ہوں گے، منی لانڈرنگ اور دہشت گردوں کو مالی تعاون کی روک تھام کے فریم ورک میں بہتری کے لیے تیزتر پیش رفت کرنا ہوگی، اس مقصد کے لیے خامیوں پر قابو پانے کی ضرورت ہے۔ اعلامیے میں لچکدار کرنسی کی پالیسی کا بھی بطورخاص ذکر کیا گیا ہے اور کہا ہے کہ بیرونی معاشی خطرات سے بچنے اور زرمبادلہ کے ذخائر بڑھانے کیلئے مارکیٹ کی بنیاد پر لچکدار ایکسچینج ریٹ ضروری ہے، سخت مانیٹری پالیسی میں نرمی اس وقت لائی جائے جب مہنگائی میں کمی آنا شروع ہوجائے،ان اصلاحالت کے لیے اسٹیٹ بنک کی خودمختاری لازمی ہے۔ اعلامیے میں آئی ایم ایف نے گردشی قرضوں کا بھی ذکر کیا گیا ہے اور کہا گیا ہے کہ توانائی شعبے میں گردشی قرضے کا مسئلہ حل کرنے کے لیےی جامع پلان اختیار کیا گیا ہے، وصولیوں میں بہتری، نقصانات میں کمی اور نظم و نسق بہتر بنانے کے لیے پلان پر مکمل عمل درآمد ضروری ہے۔ آئی ایم ایف نے پاکستان کو مشورہ دیا ہے کہ توانائی کے شعبے میں پیداواری لاگت کی مکمل ریکوری کے لیے ٹیرف میں بروقت اور معمول کےمطابق ردوبدل ضروری ہے۔ اعلامیے میں مزید کہا گیا ہے کہ پاکستان میں کاروباری ماحول میں مزید بہتری کے لیے کوششیں جاری ہیں ،سرکاری اداروں میں اصلاحات سے مالی شعبے میں پائیدار بہتری لانے میں مدد ملے گی.

تبصرہ کریں