اتوار ۰۵ دسمبر۲۰۲۱

شہدا مچھ کی تدفین مکمل

ہفتہ, ۰۹   جنوری ۲۰۲۱ | ۰۳:۵۴ شام

سانحہ مچھ میں شہید ہونے والے میتوں کی تدفین آہوں اور سسکیوں کے ساتھ مکمل ہو گئی ہے۔ اس موقع پر رقت آمیز مناظیر بھی رپورٹ ہو رہی ہیں۔

دوسری طرف بلوچستان کے صوبائی وزیر داخلہ نے ضیاء اللہ لانگو نے ہمسایہ ممالک پر اس سانحے میں ملوث ہونے کا الزام عائد کیا ہے۔ یہ الزام انہوں نے امریکہ کے سرکاری خبررساں ادارے وائس آف امریکہ کو دیے انٹرویو میں عائد کئے ہیں۔ تاہم اس انٹرویو میں کسی خاص ملک کا نام نہیں لے رہے ہیں۔

 

          بی بی سی کے مطابق ان میتوں کی تدفین ہزارہ قبرستان اجتماعی طور پر کی گئی ہے۔ ان متیوں کی تدفین گزشتہ رات کو حکومت سے کامیاب مذاکرات ہونے کے بعد کیا گیا ہے۔ انہیں گزشتہ ہفتے کو بلوچستان کے علاقے مچھ میں قتل کئے گئے مقتولین پیشے کے اعتبار سے کان کن تھے۔  لواحقین نے حکومت انصاف کے حصول اور تحفظ کی ضمانت کا مطالبہ کرتے ہوئے انہوں نے کوئٹہ مغربی بائی پاس پر میتوں کے ساتھ دھرنا دے رکھا تھا۔ انہوں ضمانت دینے کے لئے وزیر اعظم کو آنے کا مطالبہ کیا تھا مگر وزیراعظم نے میتوں کی تدفین کو لواحقین سے ملاقات کی شرط کے طور پررکھتے ہوئے ان میتوں کی تدفین نہ کرنے کو بلیک ملینگ قرار دیا تھا۔ وزیر اعظم کے اس بیان پر کڑی تنقید دیکھی گئی۔ تاہم رائے گئے لواحقین وزیر اعظم آئے بغیر تدفین پر راضی ہونے کی خبر آگئی۔

 

                  نجی ٹیلی ویژن چینل اے آر وائی کے مطابق شہدا کے لواحقین کوایران کے مشہور عالم دین آیت اللہ ناصر مکارم شیرزی نے وزیر اعظم کی آمد سے پہلے دفن کرنے پر قائل کیا۔ تاہم ناصر مکارم شیرزی کے اس اقدام پر ہزارہ سے تعلق رکھنے والی ناموار حقوق انسانی کی کارکن جلیلہ حیدر نے کڑی تنقید کی ہے۔ 

 

                     اب وزیر اعظم شہدا کی لواحقین سے ملاقات کے لئے کوئٹہ پہنچے ہوئے ہیں۔

تبصرہ کریں