پیر , 3 اکتوبر 2022

سابق وزیراعظم محترمہ بے نظیر بھٹو کا 69 واں یوم پیدائش

بے نظیر بھٹو

ذوا لفقار علی بھٹو کی بڑی صاحبزادی اور عالم اسلام کی پہلی خاتون وزیر اعظم محترمہ بے نظیر بھٹو کا 69واں یوم پیدائش آج منایا جا رہا ہے۔

 

محترمہ بے نظیر بھٹو 21جون 1953کو کراچی میں پیدا ہوئیں۔انہوں نے ابتدائی تعلیم کراچی میں حاصل کی۔محترمہ بے نظیر بھٹو 1969 میں اعلی

تعلیم کے لئے باہر چلی گئیں اور 1973 میں انہوں نے ہارورڈ یونیورسٹی سے پولیٹیکل سائنس میں گریجویشن کیا اور پھر آکسفورڈ یونیورسٹی

سے فلسفہ۔ معاشیات،اور سیاسیا ت میں ایم اے کیا ۔تعلیم مکمل کرنے کے بعد وہ 1977 میں ملک واپس آئیں ۔ پاکستان پہنچنے کے دو ہفتے

بعد ملک میںحالات کی خرابی کی وجہ سے حکومت کا تختہ الٹ دیا گیا ۔جنرل ضیاا لحق نے ذو الفقار علی بھٹو کو جیل بھیج کر ملک میں مارشل لا ء

نافذ کر دیا اورساتھ ہی بے نظیر بھٹو کو بھی گھر میں نظر بند کر دیا گیا۔اپریل 1979 میں سپریم کورٹ آف پاکستان نے ذوالفقار علی بھٹو کو قتل

کے ایک متنازع کیس میں پھانسی کی سزا سنا دی جبکہ محترمہ بے نظیر بھٹو کو 1984 میں رہائی ملی اور وہ برطانیہ چلی گئیں۔برطانیہ میں

دو سال تک جلا وطنی کیزندگی گزارنے کے بعد 1986 میں وطن لوٹیں تو ان کا لاہور ائیر پورٹ پر فقیدالمثال استقبال کیا گیا۔1987میں آصف علی

زرداری کے ساتھ رشتہ ازدواج میں منسلک ہو گئیں،لیکن اس کے ساتھ ساتھ اپنی سیاسی جدوجہد کا دامن نہیں چھوڑا۔محترمہ بے نظیر بھٹو

نے2دسمبر1988میں 35سال کی عمر میں ملک اور اسلامی دنیا کی پہلی خاتون وزیر اعظم کے طور پر حلف اٹھایا۔اگست 1990میں20ماہ کے

بعدصدر اسحاق خان نے بے نظیر کی حکومت کو بے پناہ بدعنوانی اور کرپشن کے الزام کی وجہ سے بر طرف کر دیا ۔1993میں عام انتخابات

کے نتیجے میں محترمہ بے نظیر بھٹو ایک مرتبہ پھر وزیراعظم بن گئیں۔لیکن 1996میں پیپلز پارٹی کے اپنے ہی صدر فاروق احمد خان لغاری نے

بے نظیر کی حکومت کو بے امنی،بدعنوانی،کرپشن کے الزامات کے باعث ایک مرتبہ پھر بر طرف کر دیا۔ محترمہ بے نظیر بھٹو نےاپنے بھائی مرتضی

کے قتل اور اپنی حکومت کے ختمہونے کے کچھ عرصہ بعدجلا وطنی اختیار کرلی۔محترمہ بے نظیر بھٹو ساڑھے آٹھ سال کی جلا وطنی ختم کر

کے 18اکتوبر2007کووطنواپس آئیں تو ان کا کراچی ائیر پورٹ پر فقیدالمثال استقبال کیا گیا۔محترمہ بے نظیر بھٹو کا کارواںشاہراہ فیصل پر مزار قائد

کی جانب بڑھ رہا تھا کہ اچانک زور دار دھماکہ ہوا۔اس دھماکے میں 180 افراد جاں بحق جبکہ500 کے قریب زخمی ہوئے۔قیامت صغری کے اس

منظر میں بے نظیر بھٹو کو بحفاظت بلا ول ہاوس پہنچا دیا گیا۔

 

بے نظیر بھٹو

محترمہ بے نظیر بھٹو جب اپنے بچوں بلاول،بختاور اور آصفہ سے ملنے دوبارہ دوبئی گئیں تو ملک کے اندر جنرل مشرف نے 3نومبر کو ایمبر جنسی

نافذ کر دی۔یہ خبر سنتے ہی بے نظیر وطن واپس آئیں۔ 27دسمبر2007کو جب بے نظیر بھٹو لیاقت باغ میں عوامی جلسے سے خطاب کرنے کے بعد

اپنی گاڑی میں بیٹھ کر اسلام آباد آرہیں تھیں کہ لیاقت باغ کے مرکزی دروازے پر پیپلز یوتھ آرگنائزیشن کے کارکن بے نظیر بھٹو کے حق میں نعرے

بازی کر رہے تھے ۔اس دوران جب وہ پارٹی کاکنوں کے ساتھ اظہار یک جہتی کے لئے گاڑی کی چھت سے باہر نکل رہیں تھیں کہ نا معلوم شخص نے

ان پر فائرنگ کردی ۔اس کے بعد محترمہ بے نظیر بھٹوکی گاڑی سے کچھ فاصلے پر ایک زور دار خودکش دھماکہ ہوا۔اس دھماکےمیں بے

نظیربھٹو جس گاڑی میں سوار تھیں اس کو بھی شدید نقصان پہنچا لیکن گاڑی کا ڈرائیور اسی حالت میں گاڑی بھگا کرراولپنڈی جنرل

ہسپتال لے گیا۔جہاں محترمہ بے نظیر بھٹو زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے شہید ہو گئیں۔محترمہ بے نظیر بھٹو کو گڑھی خدا بخش میں سپرد خاک کیا گیا۔

 

یوٹیوب چینل کے لیے: یہاں کلک کریں

مزید خبروں کے لیے: یہاں کلک کریں

یہ بھی پڑھیں۔

فلمساز

سینما گھروں کے خاتمے کی وجہ سے پاکستان میں غریب کا سینما نہیں رہا، اداکارہ ،فلمساز اور ٹیلی ویژن ڈراما سیریل کی ہدایت کارہ سنگیتا

اداکارہ، فلمساز اور ٹیلی ویژن ڈراما سیریل کی ہدایت کارہ سنگیتا پاکستانی سینما کے حوالے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔